ٹی آر ٹی اردو - وزیراعظم عمران خان کی اسلامی تعاون تنظیم سے اپیل thumbnail 7

ٹی آر ٹی اردو – وزیراعظم عمران خان کی اسلامی تعاون تنظیم سے اپیل

اسلام کا درست تشخص اجاگر کرنے اور اس کا امن اور برداشت کا پیغام عام کرنے کے لئے او آئی سی کو مل کر کوششیں کرنی چاہئیں۔ انہوں نے ان خیالات کا اظہار پیر کو یہاں اسلامی تعاون تنظیم کے رکن ممالک کے سفراء کے ساتھ ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کیا

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پاکستان تمام ممالک اور لوگوں کے درمیان رواداری کی عالمی اقدار کے فروغ، باہمی احترام اور پرامن بقائے باہمی کے لئے بین الاقوامی برادری کے ساتھ بات چیت اور تعاون کے لئے پرعزم ہے، آزادی اظہار رائے کی آڑ میں اسلامی نظریات اور مذہبی شخصیات کو نشانہ بنانے سے دنیا بھر کے مسلمانوں کے جذبات مجروح ہوتے ہیں، اسلام کا درست تشخص اجاگر کرنے اور اس کا امن اور برداشت کا پیغام عام کرنے کے لئے او آئی سی کو مل کر کوششیں کرنی چاہئیں۔ انہوں نے ان خیالات کا اظہار پیر کو یہاں اسلامی تعاون تنظیم کے رکن ممالک کے سفراء کے ساتھ ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

ملاقات میں اسلامو فوبیا سے نمٹنے اور بین المذاہب ہم آہنگی کے فروغ سے متعلق تبادلہ خیال کیا گیا۔ وزیراعظم نے اس موقع پر گزشتہ سال عالم اسلام کے رہنمائوں کو تحریر کردہ اپنے دو خطوط کا ذکر کرتے ہوئے اسلامی ممالک کے سفراء کو اسلامو فوبیا کے بارے میں بین الاقوامی سطح پر آگاہی پیدا کرنے کے بارے میں آگاہ کیا اور اس مسئلیکو مل کر حل کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔ وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان کے اقدامات کا مقصد باہمی افہام و تفہیم پیدا کرنا اور بین المذاہب ہم آہنگی کو فروغ دینا ہے، اسلامو فوبیا کی کارروائیوں کے ذریعے بین المذاہب منافرت بڑھانے اور تہذیبوں کے درمیان افہام و تفہیم کو نقصان پہنچانے کے حوالے سے وزیراعظم نے دنیا بھر میں اس طرح کے واقعات میں اضافے کی بنیادی وجوہات پر توجہ دینے کی ضرورت پر زور دیا۔

انہوں نے کہا کہ اسلام کو انتہاء پسندی اور دہشت گردی کے ساتھ غلط طور پر جوڑنا مسلمانوں کی پسماندگی اور بدنامی کا باعث بنتا ہے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ اسلامی نظریات اور مذہبی شخصیات کو آزادی اظہار رائے کی آڑ میں نشانہ بنانے سے دنیا بھر کے تقریباً ڈیڑھ ارب مسلمانوں کے جذبات مجروح ہوتے ہیں۔ وزیر اعظم نے او آئی سی پر زور دیا کہ وہ بین الاقوامی برادری کو حضور اکرمۖ اور قرآن مجید کے ساتھ مسلمانوں کی دیرینہ محبت اور عقیدتکے بارے میں سمجھانے کے لئے مل کر کوششیں کرے۔

وزیر اعظم نے تمام مذہبی گروپوں کے حساس معاملات کے دفاع کے لئے قانونی ذرائع استعمال کرنے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ او آئی سی کو اسلام کا حقیقی تشخص اجاگر کرنے اور امن و برداشت کے لئے اس کے پیغام کو عام کرنے کے لئے اجتماعی کوششیں کرنے کی ضرورت ہے۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پاکستان تمام ممالک اور لوگوں کے درمیان رواداری کی عالمی اقدار کے فروغ، باہمی احترام اور پرامن بقائے باہمی کے لئے بین الاقوامی برادری کے ساتھ بات چیت اور تعاون کے لئے پرعزم ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں